ِ رائٹر اکاؤنٹ بنائیے
  ِاپنی تحریر پوسٹ کیجئے
  مفت ناول ڈاؤن لوڈ کیجئے
ِ آن لائن شاپ / کتاب آرڈر کیجئے  
       
       
  قسط وار ناول پڑھئے
  بچوں کی کہانیاں پڑھئے
  بلاگ بنانا سیکھئے
ِدیگر اہم اصناف  
       

قارئین کی پسندیدہ کیٹگریز

              

ردی مال

ٹرن ٹرن 

ٹرن ٹرن

فون کی گھنٹی مسلسل بج رہی تھی کوئی اٹھا نہیں رہا تھا 

بالآخر کیچن سے خسراہ کاکا آئے اور فون اٹھایا 

ہیلو کون

دوسری طرف سے آواز آئی 

اسلام علیکم میں مہناز رحمان بات کر رہی ہو کیا نورین سے بات ہو سکتی ہے ؟

وعلیکم اسلام مہناز کیسی ہو ٹھیک ٹھاک ہو نا

میں ابھی نورین کو بلاتا ہوں

اور خسراہ کاکا نے آواز دی نورین نورین آپکی سہیلی مہناز کا فون ہے 

جلدی او میں نے باورچی خانہ میں توے پر ڈبل روٹی رکھی ہے جلدی او 

نورین یہ سن کر فورا کمرے کیطرف بھاگی 

اور فون کا ریسیور اٹھایا 

اسلام علیکم مہناز کیا حال چال ہے 

امی کیسی ہے 

چچی جان کیسی ہے؟

کوثر کیسی ہے 

کوثر مہناز کی چھوٹی بہن تھی 

وعلیکم اسلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ نورین 

سب ٹھیک ٹھاک ہے الحمدللہ 

اللہ تعالی کا بڑا کرم ہے 

وہ میں نے فون اس لئے کیا کہ بڑے دن ہوئے ملے ہوئے آج ہمارے گھر او 

کچھ عمرو عیار کی کہانیاں اور ٹارزن کی کہانیاں کا نیا سٹاک آیا ہے موسی خان چاچا کی شاپ پر وہاں چلتے ہے اور دیکھتے ہے 

نورین نے جھٹ پٹ فون رکھ دیا بغیر جواب دئے 

کیونکہ بچوں کی کتابوں سے تو نورین کو عشق تھا 

نورین کمرے میں گئی اور امی سے پچاس روپے لئے اور مہناز کیطرف چلی گئی 

جب مہناز کے گھر پہنچی تو مہناز کی امی نے پرانے بکس سے پرانے سوٹ شلوار قمیض اور ڈوپٹے نکالے ہوئے تھے 

مہناز نے نورین کو دیکھا اور خوش ہو کر اسی کمرے میں لے گئی وہاں اس سے کہا تم بیٹھو تو مہناز کی بڑی بہن فورا کیچن گئی اور نورین کے لئے چائے بنانے گئی اور کوثر بازار سے شادی کاکا کے شاپ سے بسکٹ لانے چلی گئی 

اسی دوران مہناز کی بڑی بہن ٹرے میں چائے سجائے ہوئے اور بسکٹ لے آئی 

نورین اور مہناز چائے پینے لگے 

اچانک دیکھا کہ سر پر گھٹری لئے بنیادی ترور آئی 

مہناز کی ماں نے کہا سلام بنیادی بہن کیسی ہو 

آج بڑے دنوں بعد آئی ہو 

نورین نے کہا سلام 

بنیادی خالہ 

تو بنیادی خالہ نے کہا واہ آج تو خان کی بیٹی بھی آئی ہوئی ہے کیا بات ہے 

مہناز نے کہا بنیادی خالہ ہم ابھی بس جارہے ہے تم امی کیساتھ گپ شپ کرو 

اچانک مہناز نے کہا کہ امی یہ جو آپ نے پرانے کپڑے بکس سے نکالے ہے 

یہ پرانے دو سوٹ جارجٹ کے 

بنیادی خالہ کو دے دو 

یہ سن کر بنیادی خالہ بولی 

جگ جگ جیو میری بچی 

دیکھا کتنی کام کی بات کئ 

تو نورین نے کہا نہیں نہیں نہیں 

مت دو 

بنیادی خالہ بولی کیوں نورین بیٹی ایسا کیوں بول رہی ہو؟

تو نورین نے کہا اس لئے 

بنیادی خالہ 

کیونکہ ہمارے آقا محترم جناب حضرت محمد عربی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہے کہ جو چیز تم اپنے لئے پسند کرو وہی چیز اپنے بھائی کے لئے بھی پسند کرو 

یعنی بہترین انسان وہ ہے جو اچھی نیکی کریں 

اللہ تعالی کے نام پر ہمیشہ اعلی اور عمدہ چیز دینی چائیے ناکہ پرانی 

وہ سخی بادشاہ رب العزت جو بادشاہوں کا بادشاہ ہے وہ خود طیب و طاہر ہے 

تو کیا وہ پرانا اور ردی مال پسند کرے گا؟

یہ سن کر مہناز کی ماں بولی بلکل ٹھیک بولا نورین نے تو مہناز نے کہا اچھا تو پھر رہنے دو 

مہناز کی ماں نے کہا 

بنیادی بہن کل مجھے مہناز کے ابو نے روپے دئے ہے 

اس میں تمھارے لئے نیا سوٹ کل تحصیل بازار سے خرید کر تمھیں دے دونگی

یہ تو بچے ہے یہ کچھ نہیں سمجھتے

یہ سن کر بنیادی خالہ کی جیسے عید ہو گئی 

اور خوش ہو گئی


 


اس ویب سائٹ پر سب سے زیادہ پسند کئے جانے والے ناولز -   ڈاؤن لوڈ کیجئے

نمرہ احمد کے ناولز Nimra Ahmed Novels  عمیرہ احمد کے ناولز Umera Ahmed Novels  اشتیاق احمد کے ناولز Ishtiaq Ahmed Novels 
عمران سیریز Imran Series دیوتا سیریز Devta Series انسپکٹر جمشید سیریز Inspector Jamshed Series 
دیگر مصنفین کے ناولز شہزاد بشیر کے ناولز Shahzad Bashir Novels نسیم حجازی کے ناولز Naseem Hijazi Novels


ہمیں امید ہے کہ آپ اس ویب سائٹ سے اپنے مطالعاتی ذوق کی تسکین حاصل کرتے ہیں۔ کیا آپ اس ویب سائٹ کے ساتھ تعاون کرنا پسند فرمائیں گے؟  We hope you will enjoy downloading and reading Kitab Dost Magazine. You can support this website to grow and provide more stuff !   Donate | Contribute | Advertisement | Buy Books |
Buy Gift Items | Buy Household ItemsBuy from Amazon

Noreen Khan

I,m a writer & author who wishes to spend the rest of her life creating & telling beautiful stories.I hope that you'll enjoy your time visiting.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Leave the field below empty!

Next Post

اور کتاب گرگئی ! 

Thu Sep 21 , 2023
اور کتاب گرگئی !  افسانہ : از – شہزاد بشیر چانک اس کی نظر اس کتابوں کی دکان میں رکھی ایک کتاب سے چپک گئی۔ اندرسے فخر وانبساط کی ایک لہر سی اٹھی ۔ دل خوشی سے جھوم اٹھا۔ یہ اس کی اپنی کتاب تھی۔ اس نے ہاتھ بڑھا کر […]
Shahzad Bashir afsana

ایسی مزید دلچسپ تحریریں پڑھئے

Chief Editor

Shahzad Bashir

Shahzad Bashir is a Pakistani Entrepreneur / Author / Blogger / Publisher since 2011.